لوگوں کے لئے عدالتوں تک رسائی عملی طور پر ناممکن

نیوزالرٹ مقبوضہ کشمیر : لوگوں کے لئے عدالتوں تک رسائی عملی طور پر ناممکن عام لوگوں کو گرفتار کرکے ان کے نازک اعضاء پر بجلی کے جھٹکے لگا کر تشدد کیا گیا

لڑکوں اور خواتین کا جنسی استحصال کیا گیا مقبوضہ کشمیر کا دورہ کرنے والی انسانی حقوق کے وکلاء کی ٹیم کے انکشافات سرینگر،2 نومبر

5 اگست کے بعد وادی کشمیر کا دورہ کرنے والی انسانی حقوق کے وکلا کی ایک ٹیم نے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں کو عملی طور پر عدالتی نظام مفلوج ہے اور عام لوگوں کی اکثریت تشدد اور نفسیاتی صدمے سے دوچار ہے اس ٹیم میں انسانی حقوق کے وکلا مِہر دیسائی ، لارا جیسانی ، وینا گوڈا ، کلفٹن ڈو روزاریو ، آرتی منڈکور اور سارنگا یوگل مل ، نفسیاتی ماہر امیت سین ، ٹریڈ یونینسٹ گوتم موڈی اور بنگلور میں مقیم کارکن نگری بابیہ ، رامداس راؤ اور سواتی شیشادری شامل تھے ساؤتھ ایشین وائر کے مطابق انہوں نے 28 ستمبر سے 4 اکتوبر کے درمیان مقبوضہ کشمیرکے شوپیاں ، پلوامہ ، اسلام آباد سمیت پانچ اضلاع کا دورہ کیا۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ عام لوگوں کو بغیر کسی الزام کے گرفتار کرکے تشدد اورمار پیٹ کی گئی ۔جس کے بعد متاثرہ افراد کی چیخیں ریکارڈ کی گئیں اور لاؤڈ اسپیکر پر چلائی گئیں۔

عام لوگوں کو گرفتار کرکے ان کے نازک اعضاء پر بجلی کے جھٹکے لگا کر تشدد کیا گیا ۔لڑکوں اور خواتین کا جنسی استحصال کیا گیا۔ خوف کا یہ عالم ہے کہ کوئی بھی متاثرہ شخص یا دیگر گواہ انتقام کے خوف سے اپنے نام ظاہر کرنے پر تیار نہیں ۔ٹیم کے ایک رکن یوگل موگل نے ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ شوپیان کے ایک گاؤں میں بی بی سی پر تشدد سے متعلقہ ایک رپورٹ شائع ہونے کے بعد مبینہ طور پر راشٹریہ رائفلز کے اہلکاروں نے ایک متاثرہ شخص کی چیخیں لاؤڈ اسپیکر پر چلائیں۔اس کے بعد ، اس کو تشدد کا نشانہ بنایا ، اور کہا ،تمہیں میڈیا کے سامنے بولنے کی ہمت کیسے ہوئی؟ٹیم کے مطابق ، وادی میں لوگوں کے لئے عدالتوں تک رسائی عملی طور پر ناممکن ہوگئی ہے۔ہائی کورٹ کے وکلاء نے ٹیم کو بتایا کہ انہوں نے بنیادی دفعات کے خاتمے پر باقاعدہ عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ٹیم کے ایک رکن نے ساؤتھ ایشین وائر کو بتایا کہ بار ایسوسی ایشن نے پی ایس اے (پبلک سیفٹی ایکٹ)کے تحت نظربندی کےاحکامات ،حکم نامہ چالان درخواستوں یا خاندان کے ممبروں کو حراست میں لینے والوں سے ملنے کی درخواستوں جیسے ہنگامی معاملات میں پیش ہونے کے لئے چھ وکیلوں کو نامزد کر رکھا ہے۔ وکلا کی طرف سے ٹیم کو بتایا گیا کہ 5 اگست ، 2019 سے پہلے ، تقریبا 200 پروانہ حاضری ملزم کی درخواستیں زیر التوا ہیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 5 اگست ، 2019 سے 30 ستمبر 2019 تک 330 سے زائد پروانہ حاضری ملزم کی درخواستیں داخل کی گئیں وکلا نے کہا کہ یہاں متعدد نظربندیاں غیر قانونی ہیں ، لہذا حکومت کے علاوہ کوئی نہیں جانتا کہ کتنے افراد کو غیر قانونی طور پر نظربند کیا گیا ہے۔ کشمیر کے رہائشیوں نے ایک نیوز ویب سائٹ القمرآن لائن کو بتایا کہ ایسی اطلاعات ہیں کہ 13 ہزار سے زیادہ افراد کو غیر قانونی طور پر حراست میں لیا گیا ہے۔

غیر قانونی طور پر نظربند افراد کے لواحقین کو خدشہ ہے کہ اگر وہ اس حراست کے بارے میں شکایت کرتے ہیں یا عدالتوں سے رجوع کرتے ہیں توان پر پی ایس اے لاگو کردیا جائے گا اور ان کی رہائی ناممکن ہوجائے گی۔ “ٹیم کے ایک رکن گوڈا نے ساؤتھ ایشین وائر سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پولیس حراست میں لئے گئے افراد کے خلاف ایف آئی آر درج نہیں کررہی ہے ، جس کی وجہ سے حراست کا کوئی ریکارڈ نہیں ہے۔ گوڈا نے بتایا کہ یہاں دستاویزات کی کمی ہے اور لوگ بچوں کے لئے بھی ضمانت کی درخواستیں داخل نہیں کرسکتے کیونکہ ایف آئی آر نہیں ہے۔ لوگ انصاف اور قانون تک رسائی حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔یو اے پی اے یعنی دہشت گردی عدالت سری نگر میں ہے اور دوسرے اضلاع کے لوگوں کو وہاں پہنچنے کے لئے کوئی ٹرانسپورٹ دستیاب نہیں ہے۔

غلام محمد زرگر ، ایک بوڑھے کشمیری  نے اپنا رہائشی سرٹیفکیٹ دکھاتے ہوئے کہا کہ آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے کے ساتھ ہی اس کی دستاویز اوراس کی کشمیری شناخت بھی ختم ہوگئی۔نیو زویب سائٹ القمرآن لائن کے مطابق کشمیر میں رہائشی سرٹیفکیٹ کو مقامی طور پر “اسٹیٹ سبجیکٹ” کے نام سے جانا جاتا ہے ، جو صرف ریاست کے مستقل رہائشیوں کے پاس ہوتا ہے۔اس رپورٹ کا ایک حصہ کشمیریوں کی پریشان حال آبادی کی ذہنی صحت سے متعلق ہے ، یہ ایک انٹرویو پر مبنی ہے جو دہلی میں مقیم ماہر نفسیات سین نے کشمیر میں ذہنی صحت کے پیشہ ور افراد کے ساتھ کیا تھا۔

Leave a Reply